روس اور ترکی کے تعلقات مکمل طور پر بحال ہو چکے ہیں: پوٹین

روس اور ترکی کے باہمی تعلقات مکمل طور پر بحال ہو چکے ہیں جس کا اظہار روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے روس کے جنوبی شہر سوچی میں گزشتہ روز ترک صدر رجب طیب ایردوان کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران کیا

روس اور ترکی کے تعلقات مکمل طور پر بحال ہو چکے ہیں: پوٹین

روس اور ترکی کے باہمی تعلقات مکمل طور پر بحال ہو چکے ہیں۔

 یہ بات روسی صدر ولادیمیر پوٹن نے روس کے جنوبی شہر سوچی میں گزشتہ روز ترک صدر رجب طیب ایردوان کے ساتھ ایک ملاقات کے دوران کہی۔

 صدر ایردوان  گزشتہ  روز سرکاری دورے پر سوچی پہنچے۔

 دونوں صدور کی ملاقات سوچی میں صدارتی رہائش گاہ میں ہوئی۔

روسی صدر ولادی میر پوٹین نے کہا ہے کہ ایران، ترکی اور ان کے ملک کی جانب سے شام کے بحران کے حل کے لیے کی جانے والی کوششوں کے موثر نتائج سامنے آئے اور شام میں متحارب فریقین بالخصوص حکومت اور  حزب اختلاف کے درمیان مذاکرات کا ماحول پیدا ہوا ہے۔

خبر  کے مطابق، اپنے ترک ہم منصب رجب طیب ایردوآن سے ملاقات کے بعد پریس کانفرنس سےخطاب میں انہوں نے کہا کہ ماسکو،  ترکی کے ساتھ مل کر شام کے بحران کے حل کے لیے کوششیں جاری رکھے گا۔

 دوسری جانب صدر طیب ایردوان نے کہا کہ ترکی اور روس نے شام کے بحران کے سیاسی حل پر اتفاق کیا ہے۔

انہوں نے ترکی کی زرعی اجناس روس تک پہنچائے جانے کو اپنی خوش قسمتی قرار دیا اور توقع ظاہر کی کہ دونوں ملکوں کےدرمیان تجارتی امور کی راہ میں حائل رکاوٹیں جلد دور ہوجائیں گی۔

خیال رہے کہ ترک صدر رجب طیب ایردوان نے گزشتہ روز روس کا دورہ کیا جہاں جنوبی شہر سوچی میں دونوں صدور کے درمیان ملاقات ہوئی۔

 ماسکو اور انقرہ کے تعلقات 2015 کے اواخر میں انتہائی کشیدہ ہو گئے تھے۔

صدر ایردوان روس کے بعد آج  کویت اور اس کے بعد قطر جائیں گے۔

 



متعللقہ خبریں