ہم کسی بھی صورت دہشت گردوں کو ترکی کے ارد گرد ڈھیرے جمانے کی اجازت نہیں دیں گے، ایردوان

ادلیب میں موجود مخالفین کو  سیاسی سلسلہ حل  میں  جگہ دیا جانا لازمی امر ہے

ہم کسی بھی صورت دہشت گردوں کو ترکی کے ارد گرد ڈھیرے جمانے کی اجازت نہیں دیں گے، ایردوان

صدر رجب طیب ایردوان   کا  کہنا ہے کہ ترکی ، کسی بھی صورت اپنی سرحدوں کے کسی بھی مقام پر دہشت گردوں کو ڈھیرے جمانے کی اجازت نہیں  دے گا۔

صدر ایردوان نے روسی اخبار کومیر سانت سے انٹرویو میں شام میں سلسلہ حل   کے بارے میں اپنے جائزات پیش کیے۔

 انہوں نے انسداد ِ دہشت گردی کے حوالے سے  بتایا کہ ہم  "ترکی کے   PKK، پی وائے ڈی/وائے پی جی اور ڈی ایس جی  دہشت گردوں تنظیموں کے   خلاف جنگ میں   روس کے تعاون کی توقع رکھتے ہیں "۔

ترکی کے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پُر عزم ہونے پر زور دینے والے جناب ایردوان نے کہا کہ ہم نے اس  چیز  کی  شامی شہر وں، عفرین، جرابلس، الا باب اور ادلیب  فوجی کاروائیوں کے  ساتھ بار ہا توثیق کی ہے۔

روسی شہر سوچی میں  17 ستمبر کو روسی صدر ولا دیمر پوتن  سے ہونے والی ملاقات میں  اس معاملے کی اہمیت پر زور دیے جانے پر توجہ مبذول کراتے ہوئے صدر ِ ترکی نے بتایا کہ " ترکی  اس جنگ میں روسی تعاون کا بھی منتظر ہے۔ "

انہوں نے روس کے ساتھ  باہمی تعاون کے  آئندہ کے ایام میں بھی فعال طریقے سے جاری رہنے   کے یقین کا اظہار کرتے ہوئے واضح کیا کہ"ہم نے اعتدال پسند مخالفین  کو'دہشت گرد' قرار دیتے ہوئے ختم کیے  جانے کی  ہر کاروائی  کی مخالفت کرنے کا بار ہا  ذکرکیا ہے۔" ادلیب میں موجود مخالفین کو  سیاسی سلسلہ حل  میں  جگہ دیا جانا لازمی امر ہے ، یہ  عمل جنیوا اور آستانہ مذاکرات کو معمول کے مطابق  آگے بڑھانے  کے لیے لازمی ہے۔

پناہ گزینوں کے مسائل کا بھی تذکرہ کرنے والے جناب ایردوان نے کہا کہ "خون رِسنے والے  کسی زخم کے حامل اس مسئلے  کو محض ترکی کے مسئلے کی نظر سے دیکھنا ایک صحیح فعل نہیں ہے۔"

 

 



متعللقہ خبریں